Aeitbar Tootay to

اعتبار ٹوٹے تو۔۔۔!!!
درد کی رت کا دل میں ڈیڑا ھو ہی جاتا ھے
پلکوں پر اشکوں کا پہرا ھو ھی جاتا ھے
اجلے دن میں سانولا اندیھرا ھو ھی جاتا ھے
اعتبار ٹوٹے تو۔۔۔!!!!
ویرانی دیوار جان میں بسنے لگتی ھے
چلتے چلتے دل کی دھڑکن رکنے لگتی ھے
حسرتوں کی چتا میں زندگی جلنے لگتی ھے
اعتبار ٹوٹے تو۔۔۔!!!
دل کی بنیادوں میں دیمک سی لگ جاتی ھے
تنہائی سے مل کے گلے خوشی رونے لگتی ھے
آنکھ پانی برسا کے خون دل دھونے لگ جاتی ھے
اعتبار ٹوٹے تو۔۔۔!!!
پیچھے چھوڑ کے ہم کو ساتھی من کا آگے بڑھ  جاتا ھے
ساتھ چلتے چلتے کو ئی اپنا پل میں بچھڑ جاتا ھے
اک پل میں ھی شاذ ۃ آباد نگر دل کا اجڑ جاتا ھے

~ از abbascom پر دسمبر 2, 2011.

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: